بنوں کے لیے تمام دعویں جھوٹ

بدھ 11 اکتوبر 2017


بنوں(ڈسٹرکٹ رپورٹر) صوبائی حکومت ، وفاقی حکومت کا بنوں شہر کی خوبصورتی کیلئے 90کروڑ روپے ، نکاس کیلئے6کروڑ روپے اور بنوں شہر کو پھولوں کا شہر بنانے کے تمام دعویں صرف اخبارات تک محدود رہی عملی اقدامات کچھ نہیں ہو رہا بنوں شہر کی کھنڈرات سڑکیں ، کھنڈرات گلیاں ، تباہ حال نالیاں ، تباہ حال نکاس نے بنوں کے عوام کا جینا حرام کیا ہے 2018کے عام انتخابات قریب آتے ہی سیاسی مداری دوبارہ میدان میں نکل عوام کو بے وقوف بنانے کی ناکام کوشش کر رہے بنوں شہر کے نیبر ہوڈ ناظمین ، کونسلرز حضرات کم وسائل کے باوجود گلیوں کو پختہ کرنے کیلئے اپنا فنڈز خرچ کر رہا ہے لیکن ضلعی حکومت کے ترقیاتی کاموں کا دور دور تک نام و نشان نہیں 35ہزار روپے کے پریشر پمپ پر 1لاکھ 40ہزار روپے وصول کیا جاتا ہے بنوں شہر کی گندگی کہ جگہ جگہ فلتھ ڈپو قائم ہے دوسری طرف ڈی ایچ او آفس کی طر ف سے عوام میں طرح طرح کی بیماریوں کی افواہیں پھلتی جا رہی ہے لیکن عملی اقدامات کچھ نہیں ہو رہا بنوں کے عوامی حلقوں نے صوبائی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ بنوں کی بیوٹیفکیشن اور نکاس کا کروڑوں روپے فنڈز کہا ں ہیں ؟ اور کہاں خرچ ہو رہا ہے ساڑھے چار سال میں بنوں شہر کی کھنڈرات سڑکیں اور کھنڈرات گلیاں صوبائی حکومت کیلئے لمحہ فکریہ ہے WSSCکمپنی بنوں شہر میں صرف کاغذات تک محدود ہے عملی اقدامات کچھ نہیں ہو رہا انجمن تاجران ، سینئر نائب صدرپیر منظور علی شاہ المعروف گل پیر نے بنوں کے منتخب نمائندوں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ہم سے ووٹ تو لیا جاتا ہے لیکن بنوں شہر گندگی کے ڈھیر میں تبدیل ہو چکا ہے صوبائی اور وفاقی حکومت کی نااہلی کی وجہ سے بنوں شہرکے عوام کے مسائل میں روز بروز اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔ 
 


کہانی کو شیئر کریں۔


آپ یہ بھی دیکھنا پسند کریں گے

اپنی رائے کا اظہا ر کریں۔



Total Comments (0)

تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ مانندآئینہ محفوظ ہیں۔

بغیر اجازت کسی قسم کی اشاعت ممنوع ہے

Powered by : Murad Khan