بنوں، ٹراف لگانے والا ٹھیکیدار شتر بے مہار بن چکا ہے

منگل 13 فروری 2018


بنوں(مانند رپورٹ) قاضی محب ہاکی سٹیڈیم بنوں میں ٹراف لگانے والا ٹھیکیدار شتر بے مہار بن چکا ہے علی الاعلان کہتا ہے کہ میرے کام بارے مجھ سے کوئی نہیں پوچھ سکتا ۔ ڈسٹرکٹ سپورٹس آفس اور ڈسٹرکٹ ہاکی ایسوسی ایشن کی خاموشی بھی معنی خیز ہے ان خیالات کا اظہارجناح سروے میں مختلف کلبز کے کھلاڑیوں اور عہدیداروں نے کیا اس موقع پر عبد الحفیظ قریشی نے کہا کہ بارہا تجربہ ہو چکا ہے کہ اسٹر و ٹراف کیلئے بیس میں سیمنٹیڈ فرش ہونا ضروری ہوتا ہے مگر اپنے بچت کیلئے ٹھیکیدار صاحب تر کول ڈالنے پر مضر ہے زاہد ملک نے کہا کہ اسٹر وٹرف ہمارے لئے تقریباً 15-20سال کے بعد لگایا جارہا ہے اور اس میں بھی ٹھیکیدار حیل و حجت سے کام لے رہے ہیں یوتھ کونسلر محمد زبیر نے کہا کہا کہ ہم کسی صورت بھی غلط کام نہیں کرنے دینگے اگرچہ اس کیلئے ہمیں روڈز پر بھی نکالنا پڑے انٹر نیشنل پلیئر محمد بلال خان نے کہا کہ ہم نے دنیا میں کئی ملکوں میں ٹرف دیکھے ہے مگر جتنا ناقص کام بنو ں میں ہو رہا ہے اتنا فضول کام کہی اور نہیں دیکھا ہے فلک ناز خان نے کہا کہ ٹرف کے ارگرد جو نالی بنائی گئی ہے وہ بھی گراونڈ کی ضرورت پورا کرنے کیلئے ناکافی ہے شاہ ریاض نے کہا کہ ٹھیکیدار کہتے ہیں کہ ہم وہی پرانا پائپ لگائینگے کیونکہ ابھی وہ قابل استعمال ہے اگر چہ اس پائپ نے پہلے بھی 15سال گزارے ہیں ہم کسی طور پر بھی پرانا پائپ نہیں لگانے دینگے بشیر گل نے کہا کہ بنوں میں یہی ایک گراونڈ تھا جو کہ بہترین کھلاڑی پید اکرنے میں معاونت کر رہا تھا مگر اب موجودہ ٹھیکیدار کی ہٹ دھرمی کی وجہ سے یہ گراونڈ بھی ناقابل استعمال بنتا جا رہا ہے برکت خان نے کہا کہ ہم ڈپٹی کمشنر بنوں سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ ذاتی دلچسپی لے کر قاضی محب ہاکی گراونڈ کو تباہی سے بچائیں کیونکہ موجودہ کام کسی صورت بھی انٹر نیشنل معیار کے مطابق نہیں ہے جبکہ ٹھیکہ میں خصوصی طور پر مشتہر کیا گیا ہے کہ گراونڈ عالمی معیار کے مطابق بنایا جائے گا انہو ں نے کہا کہ گراونڈ کیلئے 6کروڑ روپے منظور کئے گئے ہیں جو کہ ادھر اُدھر کے غیر ضروری لوازمات میں صرف کرکے بنوں کو ملا ہوا ایک بہترین موقع ضائع کیا جارہا ہے۔
 


کہانی کو شیئر کریں۔


آپ یہ بھی دیکھنا پسند کریں گے

اپنی رائے کا اظہا ر کریں۔



Total Comments (0)

تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ مانندآئینہ محفوظ ہیں۔

بغیر اجازت کسی قسم کی اشاعت ممنوع ہے

Developed by : Murad Khan