0

حکومت کا نئے بلدیاتی نظام کے نفاذ پر یوٹرن لینے کا فیصلہ

 سرگودھا (مانند نیوز ڈیسک) حکومت نے نئے بلدیاتی نظام کے نفاذ پر یوٹرن لینے کا فیصلہ کرلیا۔ ذرائع کے مطابق نئے بلدیاتی نظام کے نفاذ کیلئے 400 ارب روپے درکار ہیں محکمہ بلدیات نے ان فنڈز کے حوالہ سے جب اعلیٰ حکام کو بریفنگ دی تو حکومت نے مذکورہ فنڈ جاری کرنے سے معذرت کرتے ہوئے کہا ہے کہ کورونا وائرس کی وجہ سے معاشی صورتحال خزانہ سے 400 ارب روپے نکالنے کی متحمل نہیں ہوسکتی جس پر پرانے بلدیاتی نظام کو بحال کرنے پر غور کیا جارہا ہے۔ ملک بھرمیں جنرل ضیا الحق دور کا بلدیاتی نظام بحال کیا جارہا ہے جس میں حلقہ وائز صرف ایک کونسلر اور میئر یا پھر چیئرمین ہوگا اس سلسلہ میں مشاورت کا عمل جاری ہے، بار بار بلدیاتی نظام میں تبدیلی کے باعث بلدیاتی نظام اپنی افادیت کھو چکا ہے تاہم جنرل ضیا الحق کے دور میں نافذ ہونیوالا بلدیاتی نظام جس میں ایک وارڈ میں صرف ایک کونسلر ہوتا تھا اور میونسپل کارپوریشن میں میئر جبکہ میونسپل کمیٹیوں میں چیئرمین ہوتے تھے اس نظام کو رائج کرنے پر غور کیا جارہا ہے۔

خبر پر آپ کی رائے

اپنا تبصرہ بھیجیں