0

سب سے پہلے گلگت بلتستان کی صوبائی حیثیت پر کام کرینگے، عمران خان

گلگت (مانند نیوز ڈیسک) وزیراعظم عمران خان نے کہاہے کہ سب سے پہلے گلگت بلتستان کی صوبائی حیثیت پر کام کرینگے،گلگت بلتستان کے لوگوں کے لیے ہیلتھ انشورنس لے کر آرہے، گلگت بلتستان کے لیے 300 میگاواٹ بجلی پیداوار کے منصوبے بنا رہے ہیں۔بدھ کو گلگت بلتستان کی نو منتخب کابینہ کی تقریب حلف برداری سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے گلگت کی کابینہ اور وزیراعلیٰ کو مبارکباد دی اور کہا کہ مجھے امید ہے یہاں منتخب حکومت ایک نئی روایت پیدا کرے گی،میں وہ وزیراعظم ہوں جس نے اس علاقے کو اس طرح دیکھا ہے جیسا کسی اور نے نہیں دیکھا، 15 سال کی عمر میں یہاں آیا تھا جب قراقرم ہائی وے بھی نہیں بنی تھی، جس کے بعد میں کرکٹ کھیلنے کے بعد یہاں آیا،میں اس علاقے کو جانتا ہوں اور اب ہم اسے جس رخ پر ڈالیں گے، اس سے یہاں کے عوام کی زندگی بدل جائے گی۔انہوں نے کہا کہ دنیا کے کامیاب سسٹم میں لوگوں کے پاس اپنی زندگی کے فیصلے کرنے کا اختیار ہوتا ہے اور کوئی باہر سے آ کر انہیں بتا نہیں سکتا، آپ لوگوں کو بہتر پتہ ہے کہ آپ کو کس طرح کی ترقی چاہیے، ہم اسلام آباد سے آ کر نہیں بتا سکتے کہ پراجیکٹ اے بنایا جائے پراجیکٹ بی بنایا جائے، یہ آپ فیصلہ کر سکتے ہیں، ہم جب مدینہ کی ریاست کی بات کرتے ہیں تو اس میں سب سے اہم چیز جس کو ترجیح دی گئی کہ کیسے کمزور طبقے کو اوپر اٹھانا ہے، جو لوگ زندگی کی دوڑ میں پیچھے رہ گئے ہیں انہیں اوپر کیسے لایا جائے۔انہوں نے کہا گلگت میں ایسی حکومت آئیگی جو نئے اسٹینڈرڈ قائم کرے گی۔انہوں نے کہا کہ سب سے پہلے گلگت بلتستان کی صوبائی حیثیت پر کام کریں گے، احساس پروگرام گلگت بلتستان لے کر آرہے ہیں، یہاں کے لوگوں کے لیے ہیلتھ انشورنس لے کر آرہے ہیں جس سے 10 لاکھ روپے تک لوگ کسی بھی ہسپتال میں فری علاج کراسکیں گے، گلگت بلتستان کی ٹورازم پر پوری توجہ دی جائے گی، بدقسمتی سے کورونا کی وجہ سے زیادہ سیاح نہیں آسکے، لوگوں کو اپنے گھروں کیساتھ گیسٹ روم بنانے کے لیے سستے قرضے دیں گے۔انہوں نے مزید کہا کہ اسکردو میں 250 بیڈ کے ہسپتال پر کام جاری ہے جو مکمل کیا جائے گا، گلگت بلتستان کے لیے 300 میگاواٹ بجلی پیداوار کے منصوبے بنا رہے ہیں جب کہ ہائیڈرو الیکٹرک پاور کے ساتھ اسپیشل اکنامک زون بنایا جائے گا، یہ علاقہ سی پیک کے راستے میں ہے، اس لیے یہاں پہلااسپیشل اکنامک زون بنائیں گے۔انہوں نے سابق صدر اور سابق وزیراعظم کو ایک بار پھر تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ لیڈرمیں دو خصوصیت صادق اور امین ہونا بہت ضروری ہے، حرام کا پیسااللہ کی لعنت ہے، نواز شریف اور زرداری کو 30 سال سے جانتا ہوں، اللہ کا ان پر عذاب نازل ہوتے دیکھا ہے، یہ جھوٹ بول کر کبھی لندن اورکبھی دبئی جاتے ہیں، کورونا سے لوگ مرررہے ہیں اور اپوزیشن جلسے کررہی ہے، چوری بچانے کے لیے جلسے کررہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ذہنی دبا ؤانسان کو سب سے زیادہ نقصان پہنچاتا ہے، ذہنی دباؤ دیکھنا ہے تو اسحاق ڈار کی شکل دیکھ لیتے، اسحاق ڈار جھوٹ پر جھوٹ بول رہے تھے اور سب دیکھ رہے تھے، وزیراعظم عمران خان کے گلگت پہنچنے پرگورنراورنو منتخب وزیراعلیٰ ان کا استقبال کیا،وزیراعظم کے ہمراہ وفاقی کابینہ کے اراکین بھی موجود تھے۔

خبر پر آپ کی رائے

اپنا تبصرہ بھیجیں