0

وادی مڈگلشٹ میں ڈپٹی کمشنر لوئیر چترال کی جانب سے کھلی کچہری کا انعقاد

چترال (مانند نیوز ڈیسک) تحصیل دروش کے خوبصورت ترین وادی مڈگلشٹ میں ڈپٹی کمشنر لوئیر چترال حسن عابد کی جانب سے کھلی کچہری کا انعقاد کیا گیا۔ کھلی کچہری میں محکمہ جنگلات، سی اینڈ ڈبلیو، پولیس اور دیگر محکموں کے نمائندگان بھی موجود تھے۔ علاقے کے عمائدین نے بتایا کہ مڈگلشٹ کے لوگ سولہویں  صدی عیسوی میں وسطی ایشیاء سے ہجرت کرکے یہاں آئے تھے اور یہی وجہ ہے کہ یہ لوگ اب بھی فارسی زبان بولتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مڈگلشٹ میں 4500 لوگ رہتے ہیں مگر یہ ابھی تک صحت، مواصلات وغیرہ کے سہولیات سے محروم ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مڈگلشٹ کا سڑک کئی عشرے پہلے محکمہ جنگلات نے اسلئے بنایا تھا کہ یہاں کے جنگل سے اربوں روپے کا دیار کا عمارتی لکڑی مارکیٹ تک پہنچائے اب یہ سڑک محکمہ سی اینڈ ڈبلیو کے حوالہ ہوا ہے مگر سڑ ک کی حالت انتہائی حراب ہے اور ابھی تک اسے تارکولی نہیں کیا گیا۔مقررین نے کہا کہ علاقے کے خواتین ہاتھوں سے بنیان، گرم جراب، واسکٹ، ٹوپی وغیرہ بناتی ہیں مگر ان کے ساتھ کسی بھی سرکاری یا غیر سرکاری ادارے کی جانب سے مدد نہیں ہوا ہے نہ ہی ان کو جدیدمشنیری فراہم کی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ مڈگلشٹ میں لڑکوں کیلئے صرف ایک ہائی سکول ہیں مگر لڑکیوں کیلئے بھی  ہائی سکول اور کالج کی ضرورت ہے کیونکہ یہاں کے سینکڑوں طلباء مجبور ہوکر کسی دوسرے علاقے میں لوگوں کے گھروں میں رہ کر تعلیم حاصل کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس علاقے میں  ابھی تک واپڈ ا کی بجلی نہیں ہے  اور صرف غیر سرکاری اداروں نے چھوٹے چھوٹے پن بجلی گھر بنائے ہیں  جو ناکافی ہیں۔علاقے کے لوگوں نے اس بات پر بھی تحفظات کا اظہار کیا کہ مڈگلشت  کو سیاحت کا مرکزبنایا جاتا ہے کیونکہ اس کی وجہ سے بہت زیادہ لوگوں کا یہاں آنا جانا ہوگا اور اس سے اس علاقے کی ثقافت، رسم و رواج پر اثرات پڑیں گے۔ ڈپٹی کمشنر نے یقین دہائی کرائی کہ وہ جاتے ہیں ان کی صحت سے متعلقہ مسائل حل کروانے کیلئے اقدامات اٹھائیں گے  اور باقی مسائل پر بھی کام کریں گے۔ انہوں نے  کہا کہ بعض معاملات صوبائی سطح پر حل ہوسکتے ہیں جس طرح مڈگلشت کو ٹورزم سنٹر بنانے پر لوگوں کا مطالبہ ہے کہ اسے کسی اور جگہہ ج منتقل کیا جائے  تاہم وہ ضرور صوبائی حکومت کی نوٹس میں یہ باتی لا ئیں گے۔ ڈپٹی کمشنر نے کہا کہ مڈگلشت بہت جلد ترقی کی راہ پر گامزن ہوگا اور  ملم جبہ، گلیات  کی طرح یہاں بھی سیاحوں کی آنے سے علاقے کی معیشت کافی بہتر ہوگی۔ کھلی کچہری میں اے سی ہیڈ کوارٹرز، ایڈیشنل اے سی دروش، پولیس، محکمہ جنگلات اور مواصلات کے اہلکاروں کے علاو ہ سابقہ ناظمین اور علاقے کے لوگوں نے بھی شرکت کی۔ 

خبر پر آپ کی رائے

اپنا تبصرہ بھیجیں