0

۔23 مارچ برصغیر کے مسلمانوں کیلئے علیحدہ ریاست کی نوید لے آئی، آئی جی کے پی

ہنگو (مانند نیوز ڈیسک) انسپکٹر جنرل آف پولیس خیبرپختونخواہ ڈاکٹر ثناء اللہ عباسی کا  پولیس ٹریننگ کالج ہنگو کا یوم پاکستان کے حوالے سے دورہ۔ پولیس ٹریننگ کالج ہنگوامدپر پولیس کے چاک وچوبند دستے نے ائی جی کو سلامی دی۔ائی جی نے یوم پاکستان کی مناسبت سےپولیس ٹریننگ کالج ہنگو میں پرچم کشائی بھی کی۔ائی جی نےیادگار شہداء پر حاضری دی اورپھول چڑھائے اورفاتح خوانی کی۔ڈی ائی جی کوہاٹ طیب حفیظ چیمہ اورڈی پی اوکوہاٹ سہیل خالدبھی ائی جی کےہمراہ تھے۔اس موقع  پرکمانڈنٹ پولیس ٹریننگ کالج ہنگو فصیح الدین’ڈی پی اوہنگواکرام اللہ خان’ڈی ایس پی سٹی عرفان خان’ڈی ایس پی ہیڈکوارٹرشفیق خان’پی اے ٹوکمانڈنٹ پی ٹی سی زکریا خان اوردیگرپولیس افسران  بھی موجودتھے۔کمانڈنٹ پولیس ٹریننگ کالج ہنگوفصیح الدین نےائی جی کوخوش امدیدکہا۔اس موقع پریوم پاکستان کےحوالےسےمنعقدہ تقریب کےمہمان خصوصی ائی جی خیبرپختونخواہ  ڈاکٹر ثناء اللہ عباسی نے پولیس جوانوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہپاکستان پولیس کے سب سے قدیم تربیتی ادارے پولیس ٹریننگ کالج ہنگو کے عملے اور زیر تربیت جوانوں کو یوم پاکستان کی مبارک باد دیتا ہوں۔خیبر پختونخوا پولیس میں اس ادارے کی اہمیت اور آپ جوانوں کی حوصلہ افزائی کےلیے فیصلہ کیا کہ آج 23مارچ کی خوشیاں میں آپ کے ساتھ مل کر مناوں۔یہ وطن پاک ہمارے اصلاف کی قربانیوں کا مظہر ہے۔23 مارچ کی تاریخ برصغیر کے مسلمانوں کے لیے ایک علیحدہ ریاست کی نوید لیکر آئی تاہم حکیم الامت علامہ محمد اقبال کے اس خواب کو تعبیر کرنے میں برصغیر کے مسلمانوں نے قائداعظم محمد علی جناح کی راہبری میں جو جانی و مالی قربانیاں دیں انکی مثال ملنا مشکل ہے۔آج ہم جس آزاد فضا میں سانس لے رہے ہیں اس کے  تان میں ہمارے بزرگوں اور اسلاف کا کردارروشن منیار کی مانند ہے جو کہ ہر نسل کے لیے مشعل راہ ہے۔ 23 مارچ 1940 کو جو تاریخ ساز قرار داد پاس کی گئی وہ ملک ِخداداد کے قیام کی بنیاد بنی اور بالاآخر 14 اگست کو اس بنیاد پر ایک عظیم مملکت کا قیام عمل میں لایا گیا۔دیکھا جائے کہ جب ملک کی بقاءاور سالمیت کی بات آتی ہے تو خیبر پختونخوا پولیس بھی کسی سے پیچھے نہیں رہی ہےاور اس کے افسروں و جوانوں نے ہر موقع پر بڑھ چڑھ کر غیر معمولی جرات کا مظاہرہ کیا ہے اور جان کی پرواہ کئے بغیر ہرقسم کے خطرات سے نبردآزما رہے ہیں۔ اس کا واضح ثبوت حالیہ دہشت گردی کے خلاف جاری جنگ میں فورس کے جوانوں کی بیش بہا قربانیاں ہیں۔ اگر 2010 کے عشرے کو پولیس شہدا کا عشرہ کہا جائے تو بے جانہ ہوگا۔ جس میں پولیس کے کانسٹیبل سے لیکر ایڈیشنل آئی جی پی رینک کے افسر و جوان نے قیمتی جانوں کے نذرانے پیش کرکے نئی تاریخ رقم کی ہے۔ شجاعت اور دلیری ہمیشہ سے اس فورس کا طرہ امتیاز رہا ہے۔ اوراس کا عملی مظاہرہ وہ وقتاً فوقتاً کرتے چلے آئے ہیں۔ ملک میں امن و آمان کاقیام  ترقی اور خوشحالی کی ضامن ہوتا ہے۔ اورامن و آمان کی ضامن پولیس اپنی جانوں کی قربانی دیکراپ  لوگوں کو محفوظ رکھنا اور انہیں آرام و سکون کی زندگی دینا ہماری ڈیوٹی اور ایمان کا تقاضا ہے۔ جسے ہمارے افسروں و جوانوں نے سچ کر دکھایاہے۔23مارچ کے موقع پر فورس کی سربراہ کی حیثیت سے اس عہد کا تجدید کرتا ہوں اور پوری قوم کو یقین دلاتا ہوں کہ ملک کی بقاء اور امن کی خاطرپولیس آئندہ بھی کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کرے گی اور خون کے آخری قطرے تک ملک کی دفاع اور حفاظت کے لیے لڑتی رہے گی۔

خبر پر آپ کی رائے

اپنا تبصرہ بھیجیں