0

بنوں، ینگ ڈاکٹر ایسوسی ایشن کی تنخواہیں نہ بڑھانے کے خلاف احتجاج کی دھمکی

بنوں (مانند نیوز ڈیسک) ینگ ڈاکٹر ایسوسی ایشن خیبر پختونخوا نے تنخواہیں نہ بڑھانے کے خلاف احتجاجی دھمکی دے دی تنخواہیں نہ بڑھادی گئیں اورمراعات نہ دی گئیں تو صوبے کے تمام ہسپتالوں کی سرگرمیاں معطل کردیں گے اس بارے میں چھوٹے بڑے ہسپتالوں کے ہیلتھ ملازمین کا اجلاس منعقد ہوا جس سے ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن کے صدر ڈاکٹرحکیم زادہ نے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ کوروناوباء سے سب سے زیادہ صحت کا عملہ اور ان کے خاندان بری طرح متاثر ہوئے ہیں زندگی کی قربانیاں ہیلتھ ملازمین نے دی ہیں لیکن اس کے برعکس رسک الاونسز اور دیگر مراعات ایسے محکمہ کے ملازمینوں نے حاصل کی جن کا بلواسطہ یا بلاواسطہ دور دور تک کوروناء سے کوئی لینا دینا نہیں تھا اس موقع پر ڈاکٹر احمد فراز، ڈاکٹر نوید، ڈاکٹر ارسلان، ڈاکٹر محب نصیر و دیگر بھی موجود تھے اُنہوں نے موجودہ حکومت سے سخت ناراضگی کا اظہار کیا اور کہا کہ اگر اس بار ہیلتھ ملازمین کے حقوق پر سمجھوتہ کرنے کی کوشش کی گئی یا ہیلتھ ملازمین کے حقوق کو نظرانداز کرنے کی کوشش کی گئی تو ہم صوبے کے تمام ہسپتالوں میں ایمرجنسی سروسز کے علاوہ باقی تمام سرگرمیاں معطل کر دیں گے جس کو گرینڈ ہیلتھ الائنس بنوں کی حمایت بھی حاصل ہے اُنہوں نے مزید کہا کہ مسلسل پانچ چھ سال سے ہیلتھ ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ نہیں کیا گیا ہے یہ محکمہ صحت کے ملازمین کے ساتھ سراسر ناانصافی ہے ہیلتھ ملازمین نے کورونا وباء و دیگر کٹھن حالات میں ڈیوٹیاں سرانجام دی ہیں لیکن مقابلے میں دیگر شعبوں کے ملازمین کی تنخواہیں بڑھادی گئی ہیں اور ان کو مراعات بھی دی گئی ہیں اور صحت کے ملازمین کو نظر انداز رکھا گیا ہے اس مہنگائی کے دور میں محدود تنخواہوں اور مراعات نہ دینے کی وجہ سے گھروں کے اخراجات پورے نہیں ہوتے لہٰذا تنخواہوں میں اضافے کے ساتھ ساتھ چھ سال سے مسلسل بند مراعات بھی دی جائیں اور ہمیں کوئی انتہائی قدم اٹھانے پر مجبور نہ کرے وائس چیئرمین ڈاکٹر محب نصیر نے کہاکہ کہ یہ حکومت جان بوجھ کر شعبہ صحت کے ساتھ زیادتی کر رہی ہے اور اگر اس بار مطالبات تسلیم نہ ہوئے تو صوبے کی سطح پر احتجاجی مظاہرے کرائے جائیں گے اور صوبے کے تمام ہسپتالوں کی سرگرمیاں معطل کرائی جائیں گی۔

خبر پر آپ کی رائے

اپنا تبصرہ بھیجیں