0

پشاور یونیورسٹی ملازمین کا احتجاج، اسمبلی چوک میدان جنگ بن گیا

پشاور (مانند نیوز ڈیسک) پشاور کا اسمبلی چوک میدان جنگ بن گیا۔ یونیورسٹیوں کے ملازمین نے مطالبات کے لیے اسمبلی چوک میں احتجاج کے دوران روڈ کو دونوں اطراف سے بند کر دیا۔ پولیس نے منتشرکرنے کے لیے لاٹھی چارج اور شیلنگ کی۔پشاور میں سرکاری یونیورسٹیوں کے ملازمین نے خیبر پختونخوا اسمبلی کے سامنے الاؤنس میں کٹوتی، صوبائی ہائر ایجوکیشن کمیشن کے قیام اور فیسوں میں اضافے سمیت دیگر مطالبات کے لیے احتجاج کیا۔ مظاہرین نے اسمبلی کے سامنے خیبر روڈ کو ہر قسم کی ٹریفک کے لیے دونوں اطراف سے بند کر دیا، جس سے گاڑیوں کی لمبی قطاریں لگی گئیں۔پولیس حکام کی جانب سے روڈ کو کھولنے کے لیے مظاہرین کے ساتھ مذاکرات ہوئے، جس میں تلخ کلامی ہوگئی۔ پولیس نے مظاہرین کو منتشر کرنے کیلئے لاٹھی چارج اور شلینگ کی، جس سے مظاہرین منتشر ہوگئے۔ کارروائی کے دوران 8 مظاہرین کو گرفتار کرلیا گیا، مظاہرین کے منتشر ہونے کے بعد خیبر روڈ پر ٹریفک بحال کر دی گئی۔پولیس حکام کے مطابق شہریوں کو پر امن احتجاج کا پورا پورا حق ہے، احتجاج پر امن اور ایک سائیڈ پر ہو تو کچھ نہیں کہتے، احتجاج سے اگر شہریوں کو تکلیف ہو تو قانون حرکت میں آئے گا، ہسپتالوں کو جانے والے راستے بند تھے، اس سے عوام کو تکلیف کا سامنا تھا، ایکشن لے کر احتجاج کو ختم اور ٹریفک کو بحال کر دیا۔

خبر پر آپ کی رائے

اپنا تبصرہ بھیجیں