0

کورونا سے بچاؤ کی ویکسی نیشن بڑے پیمانے پر شروع کر دی، تیمور جھگڑا

پشاور (مانند نیوز ڈیسک) خیبرپختونخوا میں شہریوں کو کورونا وباء  سے محفوظ بنانے کے لیے بڑے پیمانے پر ویکسی نیشن شروع کر رہے ہیں۔ ویکسی نیشن سنٹرز کی تعداد 270 سے بڑھا کر 1 ہزار اور یومیہ ایک لاکھ تک شہریوں کو کورونا سے بچاؤ کی ویکسین دی جائے گی۔ ابھی 30 ہزار سے زائد افراد کی روزانہ ویکسی نیشن ہو رہی ہے۔ ویکسین کی سپلائی کا کوئی مسئلہ درپیش نہیں۔ عوام ویکسین کے حوالے سے افواہوں پر یقین نہ کریں۔ ویکسن کے کوئی سنجیدہ نوعیت کے سائیڈ ایفیکٹس نہیں۔ ان خیالات کا اظہار خیبرپختونخوا کے وزیر صحت و خزانہ تیمور سلیم خان جھگڑا اور وزیراعلیٰ کے معاون خصوصی برائے اطلاعات و اعلیٰ تعلیم کامران خان بنگش نے صوبے میں کورونا سے بچاؤ کی ویکسی نیشن سے متعلق سول سیکرٹریٹ پشاور میں ایک میڈیا بریفنگ میں کیا۔ اس موقع پر تیمور جھگڑا کا کہنا تھا کہ صوبے میں بنیادی مراکز صحت اور آر ایچ سیز سمیت تمام ہسپتالوں میں ویکسی ننیش سینٹرز بنائے جا رہے ہیں۔ جس سے ان کی تعداد 270 سے بڑھ کر 1 ہزار ہو جائے گی۔ کورونا ویکسین کی سپلائی کا بھی کوئی مسئلہ درپیش نہیں ہے۔ وفاق سے خیبرپختونخوا سمیت تمام صوبوں کو ویکسین کی کھیپ تواتر کے ساتھ مل رہی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اس وقت روزانہ 30 ہزار سے زائد شہریوں کو ویکسین لگائی جا رہی ہے جبکہ آئندہ 2 سے 3 ماہ میں روزانہ 1 لاکھ سے زائد شہریوں کو ویکسین لگانے کا ہدف مقرر کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ 70 فیصد آبادی کی ویکسی نیشن کے بعد کورونا پابندیاں کم یا ختم ہو سکیں گی۔ برطانیہ میں بڑے پیمانے پر کورونا ویکسی نیشن کے بعد کوئی موت ریکارڈ نہیں ہوئی جبکہ وہاں ہیلتھ ورکرز میں نئے کورونا کیسز بھی نہیں ریکارڈ ہو رہے۔ تیمور جھگڑا نے کہا کہ یہ ہمارے پاس سنہری موقع ہے کہ ہم کورونا وباء کو مستقل بنیادوں پر شکست دیں اس کے لیے میڈیا سمیت تمام شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد کو آگے آنا ہوگا اور عوام میں ویکسین سے متعلق آگہی پیدا کرنی ہوگی۔ صوبے میں کورونا ویکسی نیشن کے آغاز کے بعد نئے کیسز کی شرح میں کمی آئی ہے۔ 25 اپریل کو ہمارے ہسپتالوں میں 90 فیصد بستر زیر استعمال تھے جبکہ اب صرف 30 فیصد زیر استعمال ہیں اور 8 سو کے قریب مریض ہسپتالوں میں داخل ہیں۔ اس وباء کے دوران ہماری معیشت کو باقی دنیا کے مقابلے میں کم نقصان اٹھانا پڑا تاہم چھوٹے کاروبار اور روزانہ اجرت حاصل کرنے والا طبقہ شدید متاثر ہوا۔ اس تمام تر صورتحال سے نکلنے کے لیے ہمیں خود، اپنے خاندان، عزیز و اقارب اور دوستوں کو ویکسی نیشن کے لیے راغب کرنا ہوگا۔ میڈیا بریفنگ دیتے ہوئے وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا کے معاون خصوصی برائے اطلاعات و اعلیٰ تعلیم کامران خان بنگش کا کہنا تھا کہ عوام احتیاطی تدابیر اختیار کریں اور ہر شہری کورونا سے بچاؤ کی ویکسین لے۔ شہری کورونا ویکسین سے متعلق افواہوں پر یقین نہ کریں۔ اس کے سنجیدہ نوعیت کے سائیڈ ایفیکٹس نہیں ہیں۔ تمام طرح کی ویکسین عالمی ادارہ صحت اور ملکی اداروں سے اجازت کے بعد لگائی جاتی ہیں۔ کامران بنگش نے کہا کہ میڈیا ویکسین کے حوالے سے آگاہی پیدا کرنے میں کردار ادا کرے۔

خبر پر آپ کی رائے

اپنا تبصرہ بھیجیں