0

چترال میں صوبائی محکمہ پیڈو کی جانب سے 54 مائیکرو پن بجلی گھر مکمل

چترال (گل حماد فاروقی) چترال میں صوبائی محکمہ پختون خواہ  انرجی ڈیویلپمنٹ آرگنائزیشن PEDO کی جانب سے محتلف علاقوں میں 54 پن بجلی گھر مکمل ہوگئے جن میں سے گیارہ بجلی گھروں کا افتتاح بھی ہوا۔ان بجلی گھروں کی تعمیر کا ٹھیکہ صوبائی حکومت کی جانب سے AKRSP آغا خان رورل سپورٹ پروگرام کو دیا گیا تھا۔ ان بجلی گھروں کی تکمیل سے چترال میں چھ میگا واٹ بجلی پیدا ہوگی جن پر ایک ارب روپے لاگت آئے گی۔ بجلی گھر کے تکمیل کے موقع پر گرم چشمہ، بمبوریت میں تقریبات بھی منعقد ہوئی۔ اس موقع پر وزیر اعلےٰ خیبر پحتون خواہ کے معاون حصوصی برائے توانائی تاج محمد رند مہمان حصوصی تھے  جنہوں نے فیتہ کاٹ کر ان بجلی گھروں کا افتتاح کیا۔ اس موقع پر پیڈ و کے چیف ایگزیکٹیو نعیم خان، پراجیکٹ ڈائریکٹر کرنل محمد شاہد، اے کے آر ایس پی کے ریجنل پروگرام منیجر  ظہور امان شاہ بھی موجود تھے۔ گرم چشمہ کے علاقے  پرا بیگ میں 200 کلو واٹ بجلی، 75KW  پن بجلی گھر بور بونو، 100 KW یور جوغ،150 کلو واٹ بجلی گھر بمبوریت،150 کلو واٹ پن بجلی گھر رمبور وغیرہ شامل ہیں۔ ہمارے نمائندے سے باتیں کرتے ہوئے معاون حصوصی تاج محمد خان نے کہا کہ ہمارے محکمے کے سروے کے مطابق چترال میں 3000 میگا واٹ پن بجلی پیدا کرنے کی گنجائش موجود ہے جس پر ہماری صوبائی حکومت کام کرے گی۔ پراجیکٹ ڈائریکٹر نعیم خٰان نے کہا کہ فیز ٹو میں 672 مائیکرو  ہائڈرو  پاوئر ہاؤس پر  کام شروع ہوگا  جو 21 اضلاع میں موجود ہیں یعنی جہاں پانی اوپر سے نیچے آتے ہوئے بہتا ہے وہاں بجلی گھر بن سکتا ہے اور ان میں سے زیادہ تر بجلی گھر چترال میں ہوں گے۔ پراجیکٹ ڈائریکٹر کرنل محمد شاہد نے کہا کہ چترال میں 54 چھوٹے پن بجلی گھر AKRSP کو حوالہ ہوئے تھے جن  سے چھ میگا واٹ بجلی پیدا ہوگی اور اس پر ایک ارب روپے کی لاگت آئے گی۔ اب ان میں گیارہ بجلی گھر مکمل ہوچکے ہیں جن سے 1.7 میگا واٹ بجلی پیدا ہوں گی۔اقلیتی امور پر وزیر اعلےٰ خیبر پحتون خواہ کے معاون حصوصی وزیر زادہ کیلاش نے کہا کہ اس سے جنگلات پر بوجھ کم ہوگا اور وزیر اعظم کے مشن  کلین اینڈ گرین پاکستان کے پالیسی پر چلتے ہوئے بغیر آلودگی کی توانائی میسر ہوں گی۔سماجی اور سیاسی کارکن عبد الطیف نے کہا کہ چترال کے دونوں اضلاع میں اگر لوگ کھانا پکانے اور خود کو سردی سے بچاکر گرم رکھنے کیلئے اگر دن رات بھی بجلی کا ہیٹر استعمال کرے تو ہمیں 54 میگا واٹ بجلی کی ضرورت ہوگی اب موجوددہ حکومت نے  چترال میں جو پن بجلی گھروں کا سلسلسہ شروع کیا ہے اس سے یقینی طور پر ہمارے جنگلات کی بے دریغ کٹائی رک جائے گی اور لوگ لکڑی کی بجائے بجلی استعمال کرے گی۔ تقریب کے دوران کیلاش خواتین نے آنے والے مہمانوں کو روایتی چوغہ اور شمینی یعنی ہاتھ سے بنے ہوئے رنگین پٹی پہنائے جو عزت کی نشانی سمجھی جاتی ہے۔ ان بجلی گھروں پر علاقے کے لوگوں نے خوشی کا اظہار کیا۔ صوبائی وزیر نے اے کے آر ایس پی کی خدمات کو بھی سراہا جن کی کوششوں سے یہ منصوبہ مکمل ہوا۔

خبر پر آپ کی رائے

اپنا تبصرہ بھیجیں