0

ٹی ایل پی مارچ، راولپنڈی اسلام آباد کو ملانے والی مرکزی شاہراہیں بند

اسلام آباد (مانند نیوز ڈیسک) تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) مارچ سے نمٹنے کے لیے راولپنڈی مری روڈ کے علاوہ ملحقہ شاہراہیں دوسرے روز بھی کنٹینرز لگا کر سیل کی گئیں، میٹروبس اور پبلک ٹرانسپورٹ بھی بند رہی، معمولات ز ندگی بری طرح متاثر ہوئے۔ تفصیلات کے مطابق کالعدم تحریک لبیک کے دھرنے روکنے کے لیے راولپنڈی اور اسلام آباد کو ملانے والی مرکزی شاہراہیں سیل کر دی گئیں، جس کے بعد متبادل راستوں پر شدید ٹریفک جام ہو گیا۔ راولپنڈی میں کیے گئے پیشگی انتظامات نے نظام زندگی درہم برہم کردیا، مری روڈ دوسرے روز بھی ٹریفک کے لیے، جبکہ اسی روڈ پر قائم تعلیمی ادارے، دفاتر، بینک اور تجارتی مراکز بھی مکمل طور پر بند ہیں، ملحقہ علاقوں کے رہائشی شدید پریشانی کا شکار ہیں۔فیض آباد سے سکستھ روڈ تک پولیس کی بھاری نفری تعینات جبکہ متبادل راستوں پر شدید ٹریفک جام رہی، راولپنڈی میں صدر سے فیض آباد تک میٹرو بس معطل اور پبلک ٹرانسپورٹ بند ہونے سے شہری پیدل چلنے پر مجبور ہو گئے، سرکاری ہسپتالوں کو جانے والے راستے بھی سیل کئے گئے جس سے مریضوں اور ان کے اہل خانہ کو شدید پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔ترجمان اسلام آباد ٹریفک پولیس کا کہنا  ہے کہ اسلام آباد میں بیشترشاہراہیں ٹریفک کیلئے کھلی ہیں۔ اسلام آباد ایکسپریس وے، لہتراڑ روڈ، پشاورروڈ، سرینگرہائی وے، جناح ایونیو ٹریفک کیلئے کھلا ہے۔ ٹریفک پولیس کے مطابق مارگلہ روڈ،شاہراہ دستور،اتاترک ایونیو،فیصل ایونیو اورنائنتھ ایونیو بھی ٹریفک کیلئے کھلا  رکھا گیا۔ آئی جے پی روڈ ا سٹیڈیم روڈ کی جانب سے بند ہے۔ مری روڈ فیض الاسلام اسٹاپ پر دونوں اطراف سے بھی بند ہے۔دوسری جانب پاکستان ریلوے نے بھی مذہبی و سیاسی جماعتوں کی جانب سے اسلام آباد میں ممکنہ دھرنے کے پیش نظر متعدد ٹرینیں منسوخ کردیں،لاہور اور راولپنڈی کے درمیان ٹرین آپریشن درہم برہم ہوگیا، لاہور سے راولپنڈی کے درمیان جانے والی تمام ریل کار ٹرینوں اور گرین لائن ٹرین کو بھی منسوخ کردیا گیا،لاہور سے راولپنڈی جانے والی تیزگام ایکسپریس ٹرین کا روٹ تبدیل کرکے اسے لاہور سے براستہ گجرات کی بجائے لاہور سے براستہ فیصل آباد راولپنڈی کے درمیان چلایا گیا اور اسی روٹ سے ہی اس ٹرین کو واپس لایا گیا، لاہور سے راولپنڈی جانے والی 3ٹرینوں عوام ایکسپریس ٹرین الصبح چلنے والی سبک خرم ریل کار اور جعفر ایکسپریس ٹرین کو کئی گھنٹوں کی تاخیر سے راولپنڈی کیلئے روانہ ہوئی، لاہور،راولپنڈی اور پشاور سیکشن پر ٹرین آپریشن متاثر ہونے کی وجہ سے ریلوے کو ایک روز میں لاکھوں روپے کا مالی نقصان کا سامنا کرنا پڑا۔ریلوے اسٹیشنز پر سکیورٹی انتظامات کو سخت کردیا گیا اور کمانڈوز کو سٹیشنز کے داخلی اور خارجی راستوں پر تعینات کرکے ٹرینوں کے اندر بھی کمانڈوز کو گشت کرنے اور کسی بھی ناگہانی صورتحال میں ٹرین ڈرائیوروں کو بھی تحفظ فراہم کرنے کی ہدایت کی گئی۔ ڈی آئی جی ریلوے پولیس وقار عباسی نے لاہور،راولپنڈی،پشاور،جہلم،لالہ موسیٰ،گجرات اوروزیر آباد ریلوے سٹیشنوں اور پلیٹ فارموں پر کمانڈوز کو گشت اور الرٹ رہنے کی ہدایات کی گئیں۔

خبر پر آپ کی رائے

اپنا تبصرہ بھیجیں