0

بابراعظم، عمران خان بنیں گے یا شعیب ملک؟

اسلام آباد (مانند نیوز ڈیسک) قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان بابر اعظم ٹی 20 ورلڈ کپ 2022ء میں ایسے موڑ پر پہنچ گئے ہیں، جہاں وہ تاریخی لحاظ سے عمران خان یا پھر شعیب ملک بن سکتے ہیں۔گرین شرٹس نے بابراعظم کی قیادت میں سڈنی کے گراؤنڈ پر پہلے سیمی فائنل میں نیوزی لینڈ کو 7 وکٹوں سے شکست دے کر ایونٹ کے فائنل کے لیے کوالیفائی کرلیا۔ وہ ایونٹ کے فائنل مقابلے میں پہنچنے والی پہلی ٹیم بن گئی۔قوم ٹیم کی فائنل میں حریف ٹیم کونسی ہوگی؟ بھارت یا انگلینڈ؟ یہاں سے ہی بابراعظم کی قسمت کا نیا سفر شروع ہوتا ہے، آپ کہیں گے کہ یہ کیا بات ہوئی؟یہ گتھی بھی ہم سلجھا دیتے ہیں، پاکستان 30 سال قبل 1992 میں اسی سڈنی کے میدان میں سیمی فائنل میں نیوزی لینڈ کو عمران خان کی قیادت میں شکست دی تھی اور فائنل میں انگلینڈ کا سامنا کیا تھا۔دوسرے سیمی فائنل میں اگر بھارت کو انگلینڈ کی ٹیم شکست دیتی ہے تو آسٹریلیا کے تاریخی میلبرن اسٹیڈیم میں اس کا ایک بار پھر پاکستان سے فائنل میں مقابلہ ہوگا، جیت کی تاریخ دہرانے پر یقینی طور پر بابراعظم کی عمران خان سے مماثلت بنتی ہے۔دوسری طرف پاکستان نے 2007ء کے ورلڈ کپ کے سیمی فائنل میں شعیب ملک کی قیادت میں کیپ ٹاؤن میں نیوزی لینڈ کو 6 وکٹوں سے شکست دی تھی۔ایونٹ کے دوسرے سیمی فائنل میں اگر انگلش الیون کو بھارت نے مات دے دی تو ٹھیک 15 سال بعد پاکستان اور بھارت ایک بار پھر ٹی 20  کے فائنل میں ہوں گے۔اس میچ میں بھارتی سورماؤں نے گرین شرٹس کو شکست دی تھی، یوں وہ شعیب ملک بن جائیں گے، اگر بابر اعظم فائنل میں روایتی حریف کو اس مقابلے میں مات دے دیتے ہیں تو وہ یقینی طور پر شعیب الیون کا بدلہ لے لیں گے۔عمران خان الیون اور بابراعظم الیون میں مماثلت کی ایک مزید جھلکآسٹریلیا میں 30 سال قبل عمران خان کی قیادت میں ورلڈکپ معرکہ سر کرنے کے لیے ٹیم میدان میں اتری تو اسے شروع کی شکستوں کے باعث کافی تنقید کا سامنا کرنا پڑا بالکل ایسا ہی بابراعظم الیون کو بھی رہا۔اس ایونٹ کے دوران عمران خان کی انفرادی کارکردگی کی طرح بابراعظم کی انفرادی کارکردگی بھی ناقدین کے لفظی تیروں کا سبب بنی۔عمران خان اور بابراعظم دونوں ہی نے آئی سی سی کے ان ایونٹس میں اپنی پرفارمنس سے ناقدین کو لاجواب بلکہ تعریف کرنے پر مجبور کردیا تھا۔اس موقع پر پاکستان کے سابق فاسٹ بولر شعیب اختر کے جیو نیوز کے دیے گئے انٹرویو کے وہ جملے یاد آگئے، جو انہوں نے گزشتہ ٹی20 ورلڈکپ میں بابراعظم اور محمد رضوان کی شاندار پرفارمنسکی بدولت دی گئی شکست کے بعد دیے تھے۔شعیب اختر نے کہا تھا کہ آج کے میچ میں شکست کے بعد بھارت کو ہمیشہ دو اعظم ہمیشہ یاد رہیں گے، ایک قائداعظم اور دوسرے بابر اعظم۔ بشکریہ جنگ

خبر پر آپ کی رائے

اپنا تبصرہ بھیجیں