0

وکلاء برادری کو تحفظ فراہم کیا جائے،تانیہ گل ایڈوکیٹ

مردان(مانند نیوز) ممتاز قانون دان، نوشہرہ ڈسٹرک بارایسوسی ایشن کی نائب صدر اور قومی وطن پارٹی کے جوائنٹ سیکرٹری تانیہ گل ایڈوکیٹ نے اخباری نمائندوں سے بات کرتے ہوئے کہاہے کہ پشاور ہائیکورٹ بار روم کےن ادر قاتلانہ حملہ اور اس کے نتیجہ میں لطیف خان آفریدی  کی بہیمانہ قتل کی پرزور مذمت کرتے ہوں۔انہوں نے کہا کہ بار رومز/عدالتوں کے اندر وکلاء اور سائلین محفوظ نہیں ہے اور آئے روز  وکلاء کو نشانہ بنایا جارہا ہے انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ عبدالطیف آفریدی ایڈووکیٹ کے قاتلوں کو فی الفور سخت سزا دی جائے اور وکلاء کی ہر سطح پر حفاظت کو یقینی بنایا جائے انہوں نے عبدالطیف آفریدی ایڈووکیٹ لطیف لالا   ایک عظیم استاد تھے  جن کے زیر سایہ سیاسی ورکرز کے ساتھ ساتھ جونیئر وکلاء  تربیت حاصل کرتے رہے ہیں۔ وہ سیاسی کارکنوں اور جونیئرز وکلا  کے لیے سایہ دار درخت تھے۔ عبدالطیف آفریدی نے ہزاروں مزدوروں، سیاسی کارکنوں اور شہریوں کے مقدمات بغیر فیس کے لڑے۔یہی نہیں انہوں نے اعلی عدالتوں میں انسانی حقوق سے متعلق درخواستوں کی پیروی کرتیتھے۔ذاتی زندگی میں انتہائی ملنسار اور شفقت برتنے والے انسان تھے۔انہوں مزید کہا کہ صوبائی حکومت سیاسی جوڑ توڑ کے بجائے امن وامان پر توجہ دیتی تو یہ صورتحال نہ ہوتی۔ پشاور ہائی کورٹ بار کے اندر یہ واقعہ ہونا امن وامان کی سنگینی کا ثبوت ہے، بہیمانہ جرم کا ارتکاب کرنے والوں کو قانون کیمطابق سخت ترین سزا دی جائے۔ان کی شہادت  سے آج  صرف ان کا خاندان  متاثر نہیں ہوا بلکہ  پشتون ملت کو بہت بڑا نقصان پہنچا جس کا نقصان قوم عشروں تک پورا نہیں کر پائیگا۔ اس سلسلے میں تمام پشتون رہنماوں پر لازم ہے۔ کہ وہ  ان کے قوم دوست سوچ کی خاطر  قوم کومتحد کرنے کیلئے تمام اختلافات ختم کرکے  ان کے پشتون دوست سوچ کو آگے بڑھائیں۔۔

خبر پر آپ کی رائے

اپنا تبصرہ بھیجیں