0

بلوچستان اپنی صلاحیتوں سے فائدہ اٹھانے کے لیے نئی ماہی پروری پالیسی بنائے گا،ویلتھ پاک

کراچی (مانند نیوز ) حکومت بلوچستان نے ماہی گیری کی پالیسی کی نئے سرے سے تشکیل اور قانونی ڈھانچہ پر نظر ثانی کے لیے ایک ٹیکنیکل ورکنگ گروپ تشکیل دیا ہے جو 26 ممبران پر مشتمل ہے جس میں ایک چیئرپرسن، 10 مکمل ممبران، چار مبصرین بشمول فشر فوک کمیونٹی ایسوسی ایشنز، ایکسپورٹرز، سول سوسائٹی کی تنظیمیں اور عطیہ دہندگان، دو گروپ سیکرٹریز ایک سمندری اور دوسرا اندرون ملک ماہی گیری کے لیے اور سات ممبران وقتا فوقتا مناسب چینل کے ذریعے درخواست کے خلاف متعلقہ وفاقی اور صوبائی محکموں کی نمائندگی کے لیے کال ہوں گے۔ نوٹیفکیشن کے مطابق فشریز اینڈ کوسٹل ڈویلپمنٹ ڈیپارٹمنٹ بلوچستان کے سیکریٹری اس کے چیئرمین کے طور پر کام کریں گے اور اقوام متحدہ کے فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن کا نمائندہ اس کا کنوینر ہوگا۔بلوچستان میں ماہی گیری کے شعبے میں بہت زیادہ پوٹینشل موجود ہے، اور ساحلی پٹی میں اس کی آبادی بنیادی طور پر اپنی روزی کے لیے ماہی گیری پر انحصار کرتی ہے۔ بلوچستان میں پیدا ہونے والی تقریبا تمام مچھلیاں مشرق میں سندھ سے مغرب میں ایران تک پھیلی ہوئی 1,130 کلومیٹر طویل ساحلی پٹی کے ساتھ سمندری قبضے سے آتی ہیں۔صوبے میں ایک اندازے کے مطابق 52,000 ماہی گیروں نے 7,186 کشتیوں سے 150,000 ٹن سے زیادہ مچھلیاں پکڑی ہیں۔ یہ پاکستان کے کل کیچ کا ایک تہائی حصہ ہے۔ سندھ، اپنے بہت وسیع براعظمی شیلف کے ساتھ، بقیہ سمندری کیچ کا حصہ ہے۔پکڑی جانے والی بڑی انواع سمندری کیٹ فش 20,518 ٹن، ہیئر ٹیل 14,661 ٹن اور سارڈینز 10,918 ٹن ہیں۔ گزشتہ برسوں میں انفرادی انواع کے کیچ میں کافی تغیرات آئے ہیںحالانکہ گزشتہ 10 سالوں میں کل کیچ میں تقریبا 7فیصدسے زیادہ فرق نہیں آیا ہے۔ اس کیچ کی مالیت 12,698 ملین روپے سے زیادہ ہے، جو پاکستان کی مجموعی گھریلو پیداوار میں 1 فیصد سے بھی کم حصہ ڈالتی ہے۔ ایک اندازے کے مطابق 300,000 افراد اس صنعت پر منحصر ہیں۔ ماہی گیری کی سرگرمی آٹھ بڑی بندرگاہوںلینڈنگ سائٹس پر مرکوز ہے۔ ان میں گوادر اور پسنی سب سے اہم ہیں۔ دونوں ضلع گوادر میں ہیں۔ صوبہ سندھ سے آنے والے ٹرالروں کے ذریعے بلوچستان کے علاقائی سمندر میں غیر قانونی شکار کا سنگین مسئلہ ہے۔ یہ بحری جہاز ٹرول اور سینز جیسے گیئرز کا استعمال کرتے ہیں جن پر بلوچستان میں پابندی ہے اور یہ بہت تباہ کن ہیں۔ ان کشتیوں کا کیچ بلوچستان کیچ کے حصے کے طور پر درج نہیں ہے۔ بلوچستان میں نگرانی، کنٹرول اور نگرانی بہت کمزور ہے جس کی زیادہ تر وجہ فنڈنگ کی کمی ہے۔تمام لینڈنگ سائٹس میں مناسب انفراسٹرکچر کا فقدان ہے۔ تقریبا تمام مچھلیاں ساحلوں پر اتاری جاتی ہیں۔ لینڈنگ کے معیار اور قیمت کو بہتر بنانے کے لیے جیٹیوں، کھائیوں اور نیلامی ہالوں کی فوری ضرورت ہے۔ مچھلی وصول کرنے کے اسٹیشن اور پروسیسنگ مراکز کے ساتھ ساتھ متعلقہ خدمات، جیسے برف ، کشتیوں کی مرمت اور انجن کی دیکھ بھال کی سہولیات، ساحل کے ساتھ ساتھ لینڈنگ کی بڑی جگہوں پر موجود ہیں۔ مچھلی وصول کرنے والے اسٹیشن اکثر کراچی میں واقع پروسیسنگ پلانٹس کے لیے سیٹلائٹ اسٹیشن کے طور پر کام کرتے ہیں۔ بلوچستان میں زیادہ تر کیچ کو بذریعہ سڑک مکران ہائی وے کے ساتھ کراچی بھیجا جاتا ہے جہاں سے یہ پاکستانی مارکیٹ میں داخل ہوتا ہے یا برآمد کیا جاتا ہے۔ بلوچستان سے بین الاقوامی منڈیوں میں براہ راست بہت کم برآمد ہوتی ہے حالانکہ کچھ مچھلی ایران کو جاتی ہے۔ماہی پروری کے اعداد و شمار محکمہ ماہی پروری کے ذریعہ تمام اہم لینڈنگ سائٹس میں جمع کیے جاتے ہیںلیکن جمع کرنے کے نظام کو مزید جامع بنانے کے لیے بہتری کی ضرورت ہے۔ اعداد و شمار کی بہتر تشریح مینجمنٹ ٹولز کے بہتر اطلاق کا باعث بنے گی۔

Share and Enjoy !

Shares

اپنا تبصرہ بھیجیں